بورڈ آف ڈائریکٹرز

شمس الدین احمد شیخ
چیئرمین

جناب شمس الدین احمد شیخ سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی اور اینگرو پاور جین تھر پرائیویٹ لمیٹیڈ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ہیں۔ موجودہ عہدے سے قبل شمس الدین شیخ اینگرو فوڈز کے سینئر نائب صدر تھے۔ وہ سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی، تھر پاور کمپنی، اینگرو پاور جین لمیٹیڈ، اینگرو ایگزِمپ لمیٹیڈ اور اینگرو ایگزِمپ ایگری پراڈکٹس (پرائیویٹ) لمیٹیڈ کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے رکن ہیں۔

جناب شمس الدین شیخ اینگرو کارپوریشن کے ماتحت اداروں اور مختلف درجات پر صنعتکاری(مینوفیکچرنگ)، سیلز، کمرشل اور سپلائی چین میں 25 سال سے زائد کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں۔ انہوں نے این ای ڈی یونیورسٹی سے مکینیکل اینجینئرنگ میں بی ای(BE) کرنے کے بعد انڈسٹریل انجینئرنگ میں ایم ایس(MS) کے ساتھ ساتھ کولوراڈو اسٹیٹ یونیورسٹی سے ایم بی اے بھی کیا۔

شاہاب قادر
چیف ایگزیکٹو آفیسر

کیمیائی عمل اور پاور یوٹیلٹی صنعت میں شاہاب قادر 21 سال کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں جہاں وہ پراجیکٹ ڈیولپمنٹ اور پراجیکٹ چلانے سے لے کر آپریشنز اور مینجمنٹ میں مہارت رکھتے ہیں۔ پراجیکٹ کی ترقی اور اسے چلانے میں سینئر سطح پر کام کرنے کے ساتھ ساتھ اپنے کیریئر کے ابتدائی 12 سال کے دوران آپریشنز اور مینجمنٹ کی ٹیموں کا بھی حصہ رہے ہیں۔

وہ یو ای ٹی سے الیکٹریکل انجینئرنگ میں بیچلرز کی ڈگری رکھتے ہیں اور انہوں نے LUMSسے ایم بی اے کیا تھا۔ وہ مارچ 2017 میں اینگرو پاور قادرپور لمیٹیڈ کے بورڈ کا حصہ بنے۔

عالیہ یوسف
ڈائریکٹر

عالیہ یوسف اور ڈگنم اینڈ کو (Orr Dignam & Co) کی قانونی فرم میں پارٹنر ہیں اور ان کے کراچی آفس میں تعینات ہیں۔ وہ سندھ ہائی کورٹ کی ایڈووکیٹ ہیں اور گریز ان سے بیرسٹر ہیں۔ فرم کے دیگر پارٹنرز کے ہمراہ وہ وسیع تر سطح کے کارپوریٹ، مالی اور کمرشل معاملات کو دیکھتی ہیں۔ ان کی توجہ کا محور M&A (بشمول نجکاری) اورپراجیکٹ ورک، مشترکہ منصوبے اور توانائی کا شعبہ، فارماسیوٹیکل اور مواصلات کا شعبہ اور ریئل اسٹیٹ ڈیویلپمنٹ ہے۔ وہ کیمبرج یونیورسٹی کی گریجویٹ ہیں۔ وہ 2006 میں اینگرو پاور جین قادرپور لمیٹیڈ(EPQL) کا حصہ بنیں۔

جاوید اکبر
ڈائریکٹر

جاوید اکبر برطانیہ سے کیمیکل انجینئرنگ میں انڈر گریجویٹ اور پوسٹ گرجویٹ کی قابلیت رکھتے ہیں اور ایگزون(Exxon)، اینگرو اور ووپاک(Vopak) کے ساتھ فرٹیلائزر اور کیمیائی کاروبار کے شعبے میں 40 سال کا تجربہ رکھتے ہیں۔ وہ ایگزون اور اینگرو پلانٹس اور اس کی پاکستان میں توسیع کے ساتھ ساتھ امریکا اور کینیڈا میں ایگزون کی کیمیکل ٹیکنالوجی ڈویژنز کا انتظام کامیابی سے سنبھال چکے ہیں اور ایگزون پاکستان میں ہیومن ریسورس مینیجر کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دیتے رہے ہیں۔ جب ایگزون نے اینگرو کے ساتھ اپنی شراکت داری ختم کی تو وہ buyout ٹیم کا حصہ تھے۔

2006 میں ریٹائرمنٹ سے قبل وہ رائل ووپاک آف ہالینڈ اور اینگرو کے مشترکہ منصوبے اینگرو ووپاک ٹرمینل لمیٹیڈ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر بھی رہ چکے ہیں۔ ریٹائرمنٹ کے بعد انہوں نے ایک مشاورتی کمپنی کھولی جو پیٹرولیم، پیٹرو کیمیکل اور توانائی کی صنعت کے رجحانات پر تجزیے اور پیش گوئی میں مہارت رکھتی ہے اور اسٹریٹیجک بصیرت اور مشورے فراہم کرتی ہے۔ وہ داؤد ہرکولیس کارپوریشن لمیٹیڈ، ڈی ایچ فرٹیلائزر لمیٹیڈ، اینگرو فرٹیلائزر لمیٹیڈ، اینگرو پاور جین لمیٹیڈ، اینگرو پاور جین قادرپور لمیٹیڈ، اینگرو ووپاک ٹرمینل لمیٹیڈ اور جاوید اکبر ایسوسی ایٹس(پرائیویٹ) لمیٹیڈ کے بورڈ کا حصہ ہیں۔ انرجی ایکسپرٹ گروپ اور ادارہ برائے تحفظِ ماحولیات سندھ کے ماحولیاتی ماہرین کے پینل میں بھی خدمات انجام دے رہے ہیں۔ وہ 2010 میں اینگرو پاور جین قادرپور لمیٹیڈ کے بورڈ کا حصہ بنے۔

شبیر ہاشمی
ڈائریکٹر

شبیر ہاشمی کے پاس پراجیکٹ فنانس اور پرائیویٹ ایکویٹی(equity) کا سال سے زائد کا تجربہ ہے۔ وہ ابھرتی ہوئی مارکیٹ میں بڑے نجی ایکویٹی سرمایہ داروں میں سے ایک ’ایکٹس کیپیٹل‘ میں پاکستان کے معاملات سنبھالتے تھے۔ ایکٹس سے قبل وہ پاکستان اور بنگلہ دیش کیلئے CDC گروپ پی ایل سی میں خطے کے بڑے عہدے کے ذمے دار تھے۔ انہوں یو ایس ایڈ میں ایک طویل وقت گزارا اور اس کے بعد کچھ عرصے کیلئے پاکستان میں عالمی بینک سے منسلک رہے جہاں وہ ملک کے توانائی کے شعبے کی منصوبہ بندی اور ترقی کے ماہر تھے۔ ماضی میں وہ CDC اور ایکٹس کی جانب سے نامزدگی کے بعد 24 سے زائد مرتبہ مختلف بورڈ آف ڈائریکٹرز کے رکن رہ چکے ہیں جبکہ آزاد ڈائریکٹر کی حیثیت سے بھی 11 مرتبہ بورڈ آف ڈائریکٹرز کا حصہ رہ چکے ہیں۔ اس وقت وہ یو بی ایل فنڈ منیجرز، اینگرو فرٹیلائزر لمیٹیڈ، اینگرو پاور جین قاادر پور لمیٹیڈ اور LMKR ہولڈنگز میں آزاد ڈائریکٹر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔ وہ ہیلپ کیئر سوسائٹی کے بورڈ آف گورنرز کا حصہ ہیں جو لاہور میں غیر مراعات یافتہ اور غریب بچوں کیلئے k-12 اسکول چلا رہی ہے۔ انہوں نے پاکستان کے داؤد کالج آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی سے انجینئرنگ کی ڈگری حاصل کی اور امریکا کی جے ایف کینیڈی یونیورسٹی سے ایم بی اے کی ڈگری لی۔ وہ 2010 میں اینگرو پاورجین قادرپور لمیٹیڈ کے بورڈ کا حصہ بنے۔

شاہد حامد پراچہ
ڈائریکٹر

شاہد حامد پراچہ بورڈز آف داؤد لارنسپور لمیٹیڈ، ٹینگاگا جنراسی لمیٹیڈ، ری اون لمیٹیڈ، سچ انٹرنیشنل پرائیویٹ لمیٹیڈ کے بورڈ کے سربراہ ہیں۔ اینگرو فرٹیلائزرز لمیٹیڈ کے ساتھ ساتھ وہ اینگرو پاور جین لمیٹیڈ اور اینگرو پاور جین قادرپور لمیٹیڈ کے ڈائریکٹر بھی ہیں۔ وہ 2007 سے داؤد ہرکولیس گروپ سے وابستہ ہیں اور ماضی میں اینگرو کارپوریشن لمیٹیڈ اور حب پاور کمپنی لمیٹیڈ کے بورڈز میں بھی خدمات انجام دے چکے ہیں۔ وہ داؤد ہرکولیس کارپوریشن کے چیف ایگزیکٹو کے عہدے سے اکتوبر 2014 میں ریٹائر ہوئے جہاں اس سے قبل وہ گروپ کے فلاحی منصوبے ’دی داؤد فاؤنڈیشن‘ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر کی حیثیت سے بھی کام کر چکے تھے۔ اس عہدے پر کام کرنے کے ساتھ ساتھ وہ دی کراچی ایجوکیشن initiative کے پہلے چیف ایگزیکٹو آفیسر بھی تھے جو کراچی اسکول فار بزنس اینڈ لیڈرشپ کو اسپانسر بھی کرتا ہے۔

وہ برطانیہ کی سیلفارڈ یونیورسٹی سے الیکٹریکل انجینئرنگ میں گریجویٹ ہیں اور داؤد ہرکولیس گروپ کا حصہ بننے سے قبل انہوں نے اپنے کیریئر کا بیشتر حصہ ICI Plc’s پاکستان میں مختلف سینئر عہدوں پرکام کر کے گزارا جس میں برطانیہ میں اس کی بانی کمپنی(129parent company) میں عالمی منصوبے پر کام کرنا بھی شامل ہے۔ وہ اینگرو پاورجین قادرپور لمیٹیڈ کا 2010 میں حصہ بنے۔

وقار ذکریا
ڈائریکٹر

وقار ذکریہ کے پاس پاکستان اور خطے میں توانائی اور ماحولیاتی مینجمنٹ کا 35 سال سے زائد کا تجربہ ہے۔ ان کی پیشہ ورانہ توجہ کاروباری پالیسی اور اسٹریٹیجی بنانے، توانائی کی پیداوار اور تقسیم کے نظام کی منصوبہ بندی، توانائی کی قیمت کا تعین، طلب کی پیش گوئی اور توانائی کے منصوبوں کی ماحولیاتی جانچ پر مرکوز ہے۔ نجی شعبے کی فرمز کے ساتھ وہ توانائی، تیل اور گیس کے انفرا اسٹرکچر کے منصوبوں کے ساتھ ساتھ تصوراتی منصوبہ بندی، انجینئرنگ اور پراجیکٹ مینجمنٹ میں بڑے پیمانے پر شامل ہیں۔

انہوں نے توانائی کے انفرا اسٹرکچر کی ترقی، توانائی کے شعبے میں سرمایہ کاری کو بڑھانے کیلئے پالیسیاں اور قلیل و طویل المدتی توانائی کے منصوبے بنانے میں پلاننگ کمیشن، توانائی کی وزارتوں، حکومت کے زیر انتظام اداروں، عالمی بینک، ایشیائی ترقیاتی بینک اور نجی شعبے کی مدد کی۔ انہوں نے 1990 میں ہیگلر بیلے پاکستان کی بنیاد رکھنے میں اہم کردار ادا کیا تھا جہاں وہ کمپنی کے تمام معاملات دیکھتے رہے۔ وہ نیشنل پارکس بنانے اور محفوظ علاقوں کاانتظام چلانے میں حکومت اور برادریوں کی مدد کرنے میں متحرک این جی او، ہمالین وائلڈ لائف پراجیکٹ(Himalayan Wildlife Project)،کے قیام میں بھی اہم کردار ادا کر چکے ہیں۔ وہ امریکا کے میسے چوئسٹس انسٹیٹیوٹ آف ٹیکنالوجی(MIT) سے کیمیکل انجینئرنگ میں بیچلر اور ماسٹرز کی ڈگری رکھتے ہیں۔ وہ 2008 میں اینگرو پاورجین قادر پور لمیٹیڈ کا حصہ بنے تھے۔